گٹر، اتری شلوار، مجھے بچاتے کیوں نہیں ہو؟

اس کی چیخیں آج بھی مجھے پکارتی ہیں۔
وہ تاریخ ،حتیٰ کہ سال تک بھول گیا ہوں، جب پہلی دفعہ اسے چیختے سنا۔ایک منٹ دورانیے کا ویڈیو کلپ آج بھی میرا پیچھا کر تا ہے۔
شاید یہ 2007 کے آس پاس کی بات ہے۔ آمنہ مسعود جنجوعہ اپنے لاپتہ شوہر کی بازیابی کے لیے مظاہرہ کر رہی تھیں۔ ان کا بیٹا بھی ان کے ساتھ تھا، اور تب اس کی عمر 16 سال کے لگ بھگ ہو گی۔
نہ معلوم کیوں، ریاست کے کارندوں نے فیصلہ کیا کہ شہری لاپتہ کرنا بھلے جرم ہو گا، لیکن اس کا پتہ پوچھنا ضرور قابل گرفت ہے۔ درجن بھر اہلکاروں نے نوجوان نہتے لڑکے کو قابو کر لیا، اور جب لے کر چلے تو مزاحمت کےدوران بے چارے کی شلوار اتر گئ۔
شاید اس وقت کسی نے کہا بھی کہ لڑکے کو شلوار پہن لینے دو۔ لیکن جب ریاست ہی برہنہ ہو جائے تو شہریوں کی سترپوشی بے معنی ہو جاتی ہے۔ وہ پولیس اہلکار، اس نوجوان کو اسی حالت میں لے کر چلتے ہیں تاکہ گاڑی میں پٹخ سکیں اور حوالات میں پھینک سکیں۔
اس موقع پر نوجوان نے چیختے ہوئے ایک سوال پوچھا، اور کئی بار پوچھا۔ 14 سال گزر چکے ہیں، میں اس کا جواب تلاش نہیں کرپایا۔
نوجوان نے پوچھا تھا، تم لوگ مجھے بچاتے کیوں نہیں ہو؟ تم لوگ مجھے بچاتے کیوں نہیں ہو؟ کو پڑھنا جاری رکھیں

جسٹس قاضی فائز کے لیے ایک اور کٹہرا تیار

بابر ستار معروف وکیل ہیں۔ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے فیصلے کے بعد انہوں نے چند ٹویٹس کی ہیں، جنہیں پڑھنےسے تصویر کا ایک دوسرا (اور بھیانک)رخ سمجھنے کا موقع ملتا ہے۔
مفاد عامہ کے پیش نظر ، خادم نے ان کاترجمہ کیا ہے (یا کرنے کی کوشش کی ہے)
بابر ستار لکھتے ہیں
قاضی فائز عیسیٰ کے فیصلے پر بطور ایک وکیل اور ایک شہری تبصرہ کروں گا۔ بدقسمتی سے آج جشن منانے کا موقع نہیں ہے۔جس قدر چیزیں تبدیل ہوئیں، درحقیقت اتنی ہی یکساں ہیں۔
آئیں امید کریں کہ اس فیصلے کو سیاہ تاریخ کی تکرار کے طور پر یاد نہ رکھا جائے۔ ایک المیے یا ایک ڈھونگ کے طور پر نہ یاد رکھا جائے۔ یہ فیصلہ درحقیقت مٹھاس میں لپٹی ایک کڑوی گولی ہے۔
پیرانمبر 1 میں قاضی فائز عیسیٰ کی درخواست کو منظور کرتے ہوئے ،ریاست کو ان کے خلاف کیس مزید مضبوط بنانے کا ایک اور موقع دیا گیا ہے۔
جس عدالت نے مسز فائز کی جانب سے پیش کردہ منی ٹریل پر اطمینان کا اظہار کیا، اسی عدالت نے اب ایف بی آر کو ان کے اور بچوں کے اثاثوں کی چھان بین کا حکم دےد یا ہے۔ کو پڑھنا جاری رکھیں